Featured Post

Terrorism and solution? دہشت گردی اور اس کا حل جوابی بیانیہ ؟

اِس وقت جو صورت حال بعض انتہا پسند تنظیموں نے اپنے اقدامات سے اسلام اور مسلمانوں کے لیے پوری دنیا میں پیدا کر دی ہے، یہ اُسی فکر کا...

Monday, August 27, 2012

Zionist Conspiracies

صیہونی سازش
The Protocols of the elders of Zion: purports to document the minutes of a late 19th-century meeting of Jewish leaders discussing their goal of global Jewish hegemony. Their proposals to engender such include subverting the morals of the Gentile world, controlling the world's economies, and controlling the press. The Protocols is still widely available today on the Internet and in print in numerous languages. The document reveals through the mouths of the Jewish leaders a variety of plans. For example, the Protocols includes plans to subvert the morals of the non-Jewish world, plans for Jewish bankers to control the world's economies, plans for Jewish control of the press, and - ultimately - plans for the destruction of civilization. The document consists of twenty-four "protocols".   Keep reading >>>>



ہوش ميں آؤ... چوراہا … حسن نثار.)
يہ ايسے اہرام ہيں جن کي بنياديں نمک کي ہيں، يہ ايسے جنگجو ہيں جن کے گھوڑے حنوط شدہ يعني مردہ، جن کي کمانيں کنير کي شاخوں سے بنائي گئي ہيں اور تير مہندي کي شاخوں سے تراشے گئے، ان کي ڈھاليں تربوز کي کھاليں اور زرہ بکتر قرباني کے جانوروں کي کھالوں سے تيار ہوئي ہے، ان کے نيزے بيد کي لچک دار لکڑي سے گھڑ ے گئے اور تلواريں پاپولر نامي درخت سے بنوائي گئي ہيں جس کي لکڑي عموماً خلال اور ماچس کي تيلياں بنانے کے لئے استعمال ہوتي ہے اور يہ آکٹوپس کي غلامي سے نجات چاہتے ہيں?
يہ دراصل کچھ ايسا ”مائنڈ سيٹ“ ہے جن کي عقليں بہت چھوٹي ليکن زبانيں بہت لمبي ہيں? ان کي بودي بڑھکيں سن کر مجھے وہ کيوٹ سا چوہاياد آتا ہے جو غلطي سے شراب کے ڈرم ميں گر گيا اور ڈبکياں کھانے لگا کہ اتفاقاً بروري کے کسي ملازم کي نظر پڑ گئي تو اس نے ”انساني ہمدردي“ کے تحت اس کي زندگي بچانے کے لئے اسے دم سے پکڑ کر باہر پھينک ديا? کچھ دير بعد چوہے کو تھوڑي سي ہوش آئي تو وہ جھومتا جھامتا اپنے گھرکي طرف روانہ ہوا? رستے ميں اسے ايک وحشي جنگلي بلي دکھائي دي جو گہري نيند سو رہي تھي? نشے ميں دھت چوہے نے حقارت سے خونخوار بلي کو ديکھا اور پھر ٹھڈا مارتے ہوئے چلايا…
”اٹھ نرگس! شير گجر تيرا مجرا سننے آيا ہے“
انہيں اصل کہاني کي سمجھ ہي نہيں آرہي کہ امريکہ اور
امريکن تو خود ”مظلوم ترين“مخلوق ہيں? يہ نہيں جانتے کہ امريکہ ميں تو سفيد امريکن بھي ”وائٹ نيگرو“ سے زيادہ کچھ نہيں کيونکہ امريکہ کي ”سپر پاوري“ کے پيچھے دست ستم، دست علم اور دست ہنر کسي اور کا ہے جو دنياميں اسي تناسب سے ہيں جس تناسب سے آٹے ميں نمک اور دھرتي پر خشکي ہوتي ہے? اشارہ ميرايہوديت کي طرف نہيں کہ عام يہودي بھي معصوم ہے? ميرا اشارہ صيہونيت کي طرف ہے جس نے ساري جديددنيا کو اپنے شکنجے اور پنجے ميں اس طرح جکڑ رکھا ہے کہ وہ بيچاري پھڑپھڑا بھي نہيں سکتي? کياجہالت کے يہ امام جانتے ہيں کہ عصر حاضر کا سياسي اور مالياتي نظام کس نے ”ايجاد“ اوروضع کيا؟ اور وہي اسے کنٹرول کر رہے ہيں?
جن کم بختوں کو مرض کا ہي علم نہيں وہ علاج خاک کريں گے? دشمن مغرب ميں تم مشرق ميں ڈھونڈ رہے ہو، دشمن اوپر تم پاتال ميں ڈھونڈ رہے ہو، دشمن مکمل اندھيرے ميں تم روشني ميں ٹامک ٹوئياں مار رہے ہو? صيہونيوں کے ”پروٹوکولز“ ہي پڑھ لو ظالمو! اور اس کھيل کي وہ تاريخ جو ريکارڈ پرموجود ہے کہو تو ميں ”خلاصہ“ پيش کروں؟ اول تو تم نے پڑھنا نہيں دوم يہ کہ تم نے سمجھنا نہيں کہ دلوں دماغوں پر مہريں ثبت ہوچکيں ليکن پھر بھي ميں ”ڈھيٹ ابن ڈھيٹ ابن ڈھيٹ“ تھوڑي سي کوشش ضرور کروں گا کہ شايد… شايد… شايد قبوليت کي کوئي گھڑي ہو اور نہ بھي ہو توکم از کم آئندہ نسليں تو جان سکيں گي کہ ان کے تمام ايلڈرز فارغ اور جاہل نہيں تھے کہ ميں تواکثر بولتا اور لکھتا بھي صرف ان کے لئے ہوں جوابھي نہ سن سکتے ہيں نہ پڑھ سکتے ہيں کہ ان کي سماعتيں اوربصارتيں ابھي بچپن کے مرحلہ ميں ہيں?
ميں نہيں جانتا کہ جہالت کہاں سے شروع ہو کر کہاں ختم ہوتي ہے سو اس کي بھي خبر نہيں کہ اس کا جواب کہاں سے شروع کرکے کہاں ختم کرنا ہے بہرحال… بہت دور کي بات نہيں جب دنيا کے بيشتر دروازے يہوديوں پر بند کرديئے گئے اور شايد يہي وہ لمحہ تھا جب ان ميں سے ايک اقليت نے پوري دنيا سے انتقام لينے کا فيصلہ کيا ليکن شمشير نہيں تدبير کے بل بوتے پر وہي ”تدبير“ جس کي طرف اقبال? يہ کہتے ہوئے اشارہ کرتاہے:
دين کافر ”فکر و تدبير“ جہاد
دين ملاّ في سبيل اللہ فساد
ايک بار پھر عرض ہے کہ ان کا ”انتقام“ سمجھنے کے لئے يہ کتابچہ پڑھنا ضروري ہوگا:
"Protocols of the meetings of the elders of zion"
اسے پڑھنے سے بہت سا بخار بھي اتر جائے گا اور دماغ سے بہت قسم کے جالے بھي اتر جائيں گے? يہ خفيہ دستاويز پہلي بار دنياکے سامنے پروفيسر نائيلس (Nilus)کي وجہ سے آئي جو روس کے آرتھوڈوکس چرچ کے پادري تھے? انہوں نے پہلي بار روسي زبان ميں اس کا ترجمہ 1905 ميں کيا? بقول پروفيسر نائيلس کہ ”پروٹوکولز“ مختلف خفيہ ميٹنگز کے منٹس (minutes) نہيں بلکہ ان کے بارے ميں ايک رپورٹ ہے? بالشويک انقلاب پر نائيلس کو ترجمہ کے جرم ميں نہ صرف گرفتار اور قيد کيا گيا بلکہ اسے ٹارچر بھي کيا گيا? ”پروٹوکولز“ کے پہلے انگريزي مترجم کا نام تھا Victor e Marsden جو برطانوي ہونے کے ساتھ ساتھ ”مارننگ پوسٹ“ کا نمائندہ بھي تھا? وہ کئي سال روس ميں تعينات رہا اور اس کي بيوي بھي روسي تھي? بالشويک انقلاب کے بعد يہ کتابچہ روسي مہاجرين کے ذريعے نارتھ امريکہ اور جرمني پہنچا?
”پروٹوکولز“ بنيادي طور پر دنيا پہ قبضہ کا بليوپرنٹ تھا اور ہے کہ پہلے مرحلہ ميں عيسائيت اور دوسرے مرحلہ ميں مسلمانوں کو کيسے مغلوب کرنا ہے? دنيا کے تقريباً ہر بڑے حادثہ، سانحہ، واقعہ، جنگ، Slumps، انقلاب، Cost of living ميں اضافہ اور unrest کے پيچھے يہي شيطاني منصوبہ کارفرما ہے اور آج تک کاميابي سے جاري و ساري ہے?
ہنري فورڈ کا ايک انٹرويو جو 17فروري 1921 ميں "New York World" کے اندر شائع ہوا ميں اس آٹوموبيل جينئس نے ”پروٹوکول“ پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا تھا:
"The only statement I care to make about the protocols is that they fit in with what is going on. they are sixteen years old and they have fitted the world situation up to this time.|
مصيبت يہ ہے کہ مسلمانوں کے اصل حريف سائبيريا سے زيادہ ٹھنڈے اور سمندروں سے زيادہ گہرے ہيں جبکہ يہ کوئلے کي طرح گرم (جو فوراً راکھ ہوجاتا ہے) ہيں اور انہوں نے نہانے والے ٹب کو ہي سمندر سمجھا ہوا ہے?

کچھ باتيں جوذہنوں ميں راسخ رہيں تو بہتر ہوگا?
دنيا کي بيشترايجادات يہوديوں کي مرہون منت ہيں اور اس سے بھي کہيں زيادہ اہم يہ ناقابل ترديد حقيقت ہے کہ ميڈيا سے لے کر دنيا کے سياسي اور مالياتي نظام بلکہ نظاموں کے ماسٹرمائنڈ بھي صرف اورصرف يہودي ہيں? دنيا ميں کوئي غيرصيہوني يہ دعوي? نہيں کرسکتا کہ وہ عہدحاضر کے انتہائي پيچيدہ اور کثيرالچہرہ مالياتي نظام کے ہر شعبہ کو بخوبي سمجھتا اور اس پر مکمل گرفت رکھتا ہے? يوں سمجھ ليجئے کہ جيسے سپيشلسٹ ڈاکٹر ہے جوکسي ايک عضو کے بارے ميں تو بہت کچھ جانتا ہے ليکن باقي تمام جسم کے بارے ميں تقريباً بے خبر ہے? يقين مانيں کہ آج کي دنياکا مالياتي نظام بھي مکمل طور پر صرف وہي جانتے ہيں جنہوں نے اسے دنياپر مسلط کيا ہے اور يہ حربہ يا ہتھيار اس قدر ہولناک ہے کہ ہمارے سياسي للوپنجو اور جمہوري ماجھے گامے يا غلامي سے نجات کے احمق دعويدار اس کا تصور بھي نہيں کرسکتے? يہ کتنا سيريس اور بھيانک معاملہ ہے اور پوري دنيا پر اس کے کنٹرول يا کمانڈ کا کيا عالم ہے؟ اسے مندرجہ ذيل چند سطروں کي مدد سے سمجھنے کي کوشش کيجئے … بشرطيکہ اللہ توفيق عطا فرمائے? زمانہ وہ ہے جب برطانيہ سپرپاور تھا?
Baron Nathan Rothschild نے 1838 ميں بے حد حقارت سے سو فيصد سچائي بيان کي تھي جب اس نے يہ تاريخي جملہ کہا…
" I care not what puppet is placed on the throne of England to rule the empire........ The man that controls Britain's money supply controls the British empire and I control the money supply."
”مجھے اس کي قطعاً کوئي پرواہ نہيں کہ کون سي کٹھ پتلي برطانيہ عظمي? پر حکومت کرنے کے لئے برطانوي تخت پر سجائي گئي ہے? برطانيہ پر حکومت اس کي ہوتي ہے جس کے ہاتھ ميں برطانيہ کا مالياتي کنٹرول ہو اور وہ ميں ہوں جس کے ہاتھوں ميں برطانوي راج کا مالياتي کنٹرول ہے?“ (روتھ شيلڈ 1838) ?
آج پوري دنيا کا مالياتي کنٹرول کن کے ہاتھوں ميں ہے؟ کچھ ہوش بھي ہے يا نہيں؟ يہ جو دن رات چلاتے رہتے ہيں کہ… ”ہمارے خلاف سازش ہوگئي“ تو ان بڑھک بازوں کے بڑوں کو بھي علم نہيں کہ”سازش“ ہوتي کياہے؟ کي کس نے ہے؟ اور اس کي نوعيت کيا ہے؟
کيا کبھي اس تاريخي تھيسز پر بھي غور کياکہ صليبي جنگوں کے پيچھے صيہوني ہاتھ تھا؟
کيا کبھي سوچا کہ ”گولڈ سٹينڈرڈ“ کس نے متعارف کرايا اور پھر اس کے ساتھ کيسي ٹمپرنگ کي اور کاغذي کرنسي سے پلاسٹک کرنسي تک کي تاريخ کياہے اور کيوں ہے؟
اور کيا تمہيں خبر ہے کہ آج کا ہالي وڈ کبھي سنگتروں کے باغات پر مشتمل تھااوريہاں کي زمينيں کن لوگوں نے خريديں؟ عظيم الشان سٹوڈيوز بنائے تواس کاروباري سرگرمي کے پيچھے ان کے ديگر مقاصد کيا تھے؟ملٹي نيشنل کمپنياں ہوتي کيا ہيں؟ چلتي کيسے ہيں؟ کرتي کيا ہيں؟ اورآج کي دنيا ميں ان کا کردار کيا ہے؟… ايک جملہ چکھو اور پھراس کا زہر اپني روحوں ميں محسوس کرو? کيا کبھي تمہارا دھيان اس طرف گيا کہ کسان تمہارا، دھرتي تمہاري، پاني تمہارا ليکن بيج ان کا، کھادان کي، کيڑے مار دوائيں ان کي اور کسان کو قيمتي مشورے بھي ان کے، تو کيا تم اس جگاڑ کے انجام سے واقف ہو؟؟؟ ذہن ہي نہيں زمينيں بھي بنجر?امريکہ کي غلامي، ڈرون حملے، نيٹو سپلائي، غيرت پريڈ، ٹيڑھي ميڑھي انگليوں سے وکٹري کے جھوٹے نشان، مصنوعي ملين مارچ اور بس باقي ٹائيں ٹائيں فش? يہ تو اتنا بھي نہيں جانتے کہ غلام کس کے ہيں؟ آقا کون ہے؟ اور کب سے کيا کچھ کر رہے ہيں?1095 سے 1271 تک کون آپس ميں لڑتے رہے اور کرہ ? ارض کي وہ کون سي کميونٹي تھي جو انتہائي امير اور دولت مند تھي؟دنيا کي رگوں ميں سود کا اندھيراکس نے اتارا؟ اور کيا يہ 1830 نہيں تھا جب عيسائي پادريوں نے پہلي بار چھوٹي شرح کے سود کو قانوني طور پر قبول کيا؟اور پھر باقاعدہ چل سو چل…وليم گيکر (1895تا1959) بنيادي طورپر نيول کمانڈر ليکن دانشور آدمي تھا?اس نے يہوديو ں کے اعمال، کرتوتوں، منصوبوں پر طويل ريسرچ کے بعد ايک کتاب لکھي جس کا عنوان تھا… "Pawns in the game" وہ صيہونيوں کو بني نوع انسان کا ”شيطاني ٹولہ“ قرار ديتا ہے? ياد رہے کہ ہر يہودي صيہوني نہيں ہوتا ليکن ہر صيہوني يہودي ضرور ہوتا ہے? راتھ شيلڈ کا پس منظر بيان کرتے ہوئے لکھتا ہے? ايک يہودي سنار امثل 1750 ميں فرينکفرٹ (جرمني) ميں آباد ہوا تو اس نے اپني دکان کے آگے A red shield (سرخ ڈھال) کا بورڈ آويزاں کيا? چند سال بعد اس کي موت پر اس کے بيٹے امثل ميئر راتھ شيلڈ نے ان الفاظ کے جرمن متبادل کو لے کر اپني دکان کا نام House of Roth shild رکھا? 1812 ميں اس کي وفات پراس کے پانچ بيٹوں ميں سے ناتھن انتہائي ذہين اور قابل نکلا? 21 سال کي عمر ميں وہ انگلينڈ چلاگيا تاکہ بنک آف انگلينڈ ميں اثر و رسوخ پا کراپنے بھائيوں کے تعاون سے يورپ ميں ايک خودمختار بين الاقوامي بنک قائم کرسکے? صرف 30 سال کي عمر ميں اس نے بارہ اميراور بااثر ترين يہوديوں کے ساتھ ميٹنگ کي جس کامرکزي خيال يہ تھا کہ وہ سب اپنے وسائل و ذرائع کو يکجا کرنے پر رضامند ہوں تو پوري دنيا کي دولت، قدرتي ذرائع اور انساني طاقت کو کنٹرول کياجاسکتا ہے اور آج حقيقت يہ ہے کہ وہ اپنا ہدف حاصل کرچکے ہيں اور اسي لئے پچھلي قسط ميں، ميں نے امريکہ کو ”مظلوم“ اور سفيد امريکنوں کو ”وائٹ نيگروز“ لکھا تھا ?

ہاں تو ميں قصہ سنا رہا تھا راتھ شيلڈ کے منصوبہ کا کہ ”مظلوم ترين“ گلوبل اقليت ہونے کے باوجود دنيا پر کاٹھي کيسے ڈالي جا سکتي ہے? منصوبہ کا خلاصہ بلکہ اس کي چند جھلکياں پيش خدمت ہيں?
”کيونکہ لوگوں کي اکثريت نيکي کي بجائے بدي کي طرف مائل ہوتي ہے اس لئے ان پر حکومت کا بہترين طريقہ تشدد اور دہشت گردي کا استعمال ہے نہ کہ علمي مباحثے? شر وع ميں انساني معاشرہ کو اندھي طاقت سے ہي قابو ميں رکھا جاتا تھا? پھر قانون آ گيا ليکن دراصل قانون کے پردے ميں بھي اندھي طاقت ہي کام کر رہي ہوتي ہے? قانون فطرت بھي يہي ہے کہ حق … صرف طاقت ميں ہي پايا جاتا ہے?
سونے (GOLD) کي طاقت فيصلہ کن ہے? حصول مقصد کے لئے ہر حربہ جائز ہے? ہمارے ذرائع کي طاقت کو لوگوں سے پوشيدہ رہنا ہو گا? عوام پر کنٹرول کے لئے ان کي نفسيات مدنظر رکھنا ہو گي? عوامي طاقت اندھي، بے حس، غير مدلل اور نعروں کے رحم و کرم پر ہوتي ہے? ہم نے ہي سب سے پہلے عوام کے منہ ميں ”آزادي“ … ”مساوات“ اور ”اخوت“ کے الفاظ ڈالے جو ابھي تک يہ احمق طوطے دہرا رہے ہيں? فطرت ميں يہ تينوں لفظ نہيں پائے جاتے? عوام کي فطري و نسلي کبريائي کے کھنڈرات پر ہم نے سرمايہ کي کبريائي قائم کرني ہے? صنعتي سرد بازاري اور مالي پريشانيوں سے ہم اپنا مقصد حاصل کر سکتے ہيں? ہم بيروزگاري اور بھوک پيدا کر کے پسنديدہ نتائج حاصل کر سکتے ہيں? منظم دھوکہ بازي سے جاہل عوام کو بڑے بڑے الفاظ اور نعروں سے بيوقوف بنا کر اپني مرضي سے استعمال کيا جا سکتا ہے? ”انقلابي جنگ“ کے لئے گلي کوچوں ميں لڑنے اور دہشت کي حکمراني پيدا کرنا ضروري ہے کيونکہ لوگوں کو محکوم بنانے کا يہ سب سے سستا طريقہ ہے? عالمي حکومت ہمارا نصب العين ہے جس کے لئے ہر جگہ بڑي اجارہ دارياں اور دولت کے ذخائر کا قيام ضروري ہے? اسلحہ اس خيال سے اس مقدار ميں بنايا جائے کہ جاہل عوام آپس ميں لڑ کر ايک دوسرے کو تباہ کر ديں? نظام نو عالمي حکومت کے ارکان کو آمر مقرر کرے گا اور انہيں سائنس دانوں، ماہرين اقتصاديات و ماليات، صنعت کاروں اور دولت مندوں ميں سے چنے گا? قومي اور بين الاقوامي قوانين کو بدلا نہيں جائے گا بلکہ اسي حالت ميں اس طرح استعمال کيا جائے گا کہ تفہيم ميں تضاد پيدا ہو اور قانون سرے سے ہي غائب ہو جائے?“
اميد ہے روتھ شيلڈ سوچ کا کچھ نہ کچھ اندازہ ہو گيا ہو گا?
1215ء ميں رومن کيتھولک کونسل کي ميٹنگ ہوئي جس ميں سب سے اہم موضوع يورپ کے تمام ملکوں پر ”يہودي يلغار“ تھا? ميٹنگ ميں چرچ کے سربراہوں نے فيصلہ کيا کہ سود کا خاتمہ کر ديا جائے اور يہودي قرض خواہوں کے تجارت ميں بے اصول طريقوں کو جس سے وہ عوام کا استحصال کرتے ہيں روک کر بدعنواني اور بداخلاقي کو چلنے نہ ديا جائے? يہوديوں کو ان کے محلوں تک محدود کيا جائے اور عيسائيوں کو ملازم رکھنے سے روک ديا جائے کيونکہ يہودي جائنٹ سٹاک کمپني کے اصول پر کام کرتے تھے اور عيسائيوں کو فرنٹ پر رکھتے تھے اور جب کوئي واردات ہوتي تو الزام عيسائيوں پر آتا اور سزا بھي وہي بھگتتے? عيسائي عورتوں کو ملازم رکھنے پر بھي پابندي لگائي گئي کيونکہ ان کا بھي بے رحمانہ استعمال کيا جاتا? کچھ اور پابندياں بھي لگيں ليکن کمال ديکھيں کہ چرچ اور رياست کي متحدہ طاقت بھي ان کا کچھ نہ کر سکي? نتيجہ يہ کہ چرچ اور رياست کي عليحدگي کا پتہ پھينکا گيا?
1253 ميں حکومت فرانس نے يہوديوں کو ملک چھوڑنے کا حکم ديا? اکثر يہودي انگلينڈ چلے گئے جہاں 1255ء تک يہودي قرض خواہوں نے چرچ کے بڑوں اور دوسرے شرفاء پر مکمل کنٹرول حاصل کر ليا? راز کھلنے پر 18 يہودي مجرم نکلے اور بادشاہ ہنري سوم نے انہيں سزائے موت دے دي? 1272 ميں ہنري سوم فوت ہوا تو ايڈورڈ اول بادشاہ بنا اور عہد کيا کہ يہوديوں کو سودي کاروبار نہ کرنے دے گا چنانچہ 1275 ميں پارليمنٹ سے يہوديوں کے متعلق خصوصي قانون پاس کروايا جس کا مقصد تھا کہ مقروضوں کو سود خوروں کے شکنجے سے نکالا جائے ليکن يہوديوں نے پرواہ نہ کي لہ?ذا 1290 ميں کنگ ايڈورڈ نے ايک خاص حکم جاري کيا جس کے تحت تمام يہودي انگلينڈ سے نکال ديئے گئے نتيجہ يہ نکلا کہ دوسرے يورپين حکمرانوں نے بھي يہي کيا?
1348 ميں سسکيوني، 1360 ميں ہنگري، 1370 ميں بلجيم اور سلوويکيا، 1420 ميں آسٹريليا، 1444 ميں ہالينڈ، 1492 ميں سپين، 1495 ميں لتھونيا، 1498 ميں پرتگال، 1540 ميں اٹلي اور 1551 ميں بويريا نے انہيں نکال ديا? پناہ ملي تو صرف پولينڈ اور ترکي ميں? بعض مورخين کے نزديک يہ يہوديوں کا ”عہد تاريک“ تھا? اخراج کے نتيجہ ميں يہودي اپنے مخصوص باڑوں، احاطوں ميں رہنے لگے جس نے ان کے اندر نفرت اور جذبہ انتقام کو جنم ديا ليکن انہوں نے بڑھکيں اور نعرے نہيں مارے، خود کش جيکٹيں اور حملے ايجاد نہيں کئے، چھچھوروں کي طرح اچھل کود نہيں کي بلکہ ايک ايسي عالمي انقلابي تحريک کو خاموشي سے منظم کرنا شروع کر ديا جس کے نتيجہ ميں جو دنيا ان پر تنگ کي گئي تھي… آج ان کے ہاتھوں تنگ ہے اور يہ بھي نہيں جانتي کہ ”ولن“ کون ہے? جن ملکوں سے يہودي نکالے گئے تھے انہي ملکوں ميں ايک ايک کر کے داخل ہوئے اور زير زمين کام کرنے کي سٹرٹيجي بنائي گئي? کھلي تجارت کي بجائے بليک مارکيٹ پر توجہ مرکوز کي گئي? غرضيکہ ہر غير قانوني طريقہ اپنايا گيا اور ”جائنٹ سٹاک کميٹي“ کے بادشاہ تو وہ تھے ہي?
1600ء ميں وہ انگلستان ميں آئے اور بادشاہ، حکومت، آجر، اجير، چرچ اور رياست کو لڑانا شروع کر ديا? جب کنگ چارلس اور پارليمنٹ ميں رسہ کشي شروع ہوئي تو انہوں نے کرامويل سے رابطہ بنا کر ايک بہت بڑي رقم اس شرط پر دينے کا وعدہ کيا کہ وہ بادشاہ کو برطرف کر دے? پھر پرتگال کا ايک يہودي کراموئيل کا سب سے بڑا اسلحہ کا ٹھيکے دار بن گيا? سازش پھيلتي گئي اور کراموئيل اس سازش کا حصہ تھا جس نے 18 جون 1647 کو يہودي ڈائريکٹرز کو لکھا،

”مالي امداد کے عوض يہوديوں کي انگلستان ميں واپسي کي وکالت کي جائے گي ليکن جب تک کنگ چارلس زندہ ہے يہ کام ناممکن ہے? چارلس کو مقدمہ چلائے بغير سزائے موت بھي نہيں دي جاسکتي اور اس کے لئے کافي مواد بھي موجود نہيں? اس لئے ميرا مشورہ ہے کہ کنگ چارلس کو قتل کرديا جائے مگر قاتل کے حصول کے لئے ميں کچھ نہيں کرسکتا البتہ اسے بھاگنے ميں مدد دے سکتا ہوں“
يہودي ڈائريکٹر پريٹ نے اس کے جواب ميں 12 جولائي1647ء کو لکھا” جونہي چارلس کو ہٹاديا گيا اور يہوديوں کو واپس آنے کي اجازت دے دي گئي? مالي امداد فراہم کردي جائے گي ،قتل کرنا خطرناک ہے ،بہتر ہوگا کو چارلس کو فرار کا موقع ديا جائے اور پھر اسے گرفتار کرليا جائے، يوں اس پر مقدمہ چلانا اور سزائے موت دينا ممکن ہوگا“?
12نومبر1648ء چارلس کو بھاگنے کا موقع دے کر پکڑ ليا گيا، اسي دوران کراموئيل نے پارليمنٹ کے بہت سے ممبرز کو نکال ديا? اس کے باوجود جب 5دسمبر1648ء کو پارليمنٹ کا اجلاس ہوا تو اکثريت نے فيصلہ کيا کہ بادشاہ جو رعايتيں دينے کو تيار ہے وہ کافي ہيں ليکن کرامويل لڑ گيا? اس نے کرنل پرائيڈ کو حکم ديا کہ ان ارکان کو نکال ديا جائے جنہوں نے بادشاہ کے حق ميں فيصلہ ديا ہے? اس طرح پارليمنٹ ميں صرف50ارکان رہ گئے ? انہوں نے 9 جنوري1649ء کو ايک ايسي عدالت کا اعلان کيا جو بادشاہ پر مقدمہ چلائے گي? بادشاہ کي فرد جرم بنانے کے لئے کوئي انگريز وکيل نہ ملا تو ايک گمنام يہودي کو اس پر مقرر کيا گيا? بادشاہ کے خلاف سماعت ہوئي اور اس طرح انگلينڈ کے شہريوں کي طرف سے ہرگز نہيں بلکہ بين الاقوامي يہيودي مہاجنوں، سود خوروں اور قرض خواہوں کي وجہ سے بادشاہ کو مجرم قرار دے کر اسے سزائے موت ديدي گئي اور پھر 30جنوري1650ء کو لوگوں کے سامنے اس کا سر قلم کرديا گيا? يہ تھا بھيانک انتقام اس جبري خروج کا جو ايڈورڈ اول نے يہوديوں پر مسلط کيا تھا? يہاں يہ بات اچھي طرح سمجھ ليني چاہئے کہ مقصد صرف انتقام ہي نہيں بلکہ انگلينڈ کے مالياتي نظام کے ذريعہ حکومت پر قبضہ بھي ايک بڑا مقصد تھا، پھر انگلينڈ کو دوسرے ملکوں کے ساتھ بہت سي جنگوں ميں ملوث کرکے اکثر بادشاہوں کو کنگال کرنے کے بعد انہيں بڑے بڑے قرض دئيے گئے اور اس طرح تقريباً تمام يورپي اقوام کو ”مقروض“ کرديا گيا?
پھر سازشوں، جوڑ توڑ، ذہين چالوں کي ايک لمبي داستان ہے اور يہ معصوم سا کالم ظاہر ہے اس کا متحمل نہيں ہوسکتا ہم سيدھے شارٹ کٹ مار کر وليم کي تخت نشيني (1699)پر آتے ہيں جس کے بعد اس نے حکم ديا کہ يہودي بنکوں سے بارہ لاکھ پچاس ہزار پونڈ قرضہ ليں? تاريخ آج تک نہيں جانتي کہ يہ قرضہ دينے والے پوشيدہ ہاتھ کن کے تھے? ڈيل کو خفيہ رکھنے کے لئے ميٹنگ چرچ ميں ہوئي، صہيونيت نے مندرجہ ذيل شرائط پر قرض دينا قبول کيا?
1?ان کے نام ظاہر نہ کئے جائيں اور انہيں” بنک آف انگلينڈ“ کے قيام کا چارٹر ديا جائے(نامہ کے ذريعہ يہ تاثر دينا تھا کہ يہ سرکاري ہے)?
2?انہيں قانوني حق ديا جائے کہ وہ سونے (Gold) کو سکے کي بنياد(گولڈ سٹينڈرڈ) بنا سکيں?
3?انہيں ايک پونڈ سونے کے عوض دس پونڈ تک قرضہ دينے کي اجازت دي جائے?
4?پورے قومي قرضہ کو اکٹھا کرنے کے بعد انہيں يہ حق ديا جائے کہ وہ يہ قرضہ اور اس کا سود لوگوں سے براہ راست ٹيکس کے ذريعہ وصول کرسکيں?
کيا ہمارے عظيم قائدين سوچ بھي سکتے ہيں کہ گولڈ سٹينڈرڈ کے نتائج کيا نکلے؟ اگر انگلينڈ کا قرض تب 4سالوں ميں ايک ملين پونڈز سے بڑھ کر16ملين پونڈز ہوگيا تھا اور 1945ء ميں يہ قرض 22 ارب 50 کروڑ 35 لاکھ ہوچکا تھا تو اس آکٹوپس کے سامنے موجودہ دنيا کي حقيقت اور حيثيت کيا ہوگي؟ پاکستان تو کسي شمار قطار اور
کھاتے ميں ہي نہيں کہ چہ پدي چہ پدي کا شوربہ اور پھر امريکہ کي مشکيں کيسے کسي گئيں يہ اک اور طلسم ہوشربا ہے جو کسي ”حضرت صاحب“ کي سمجھ ميں بھي نہ آسکے گي کہ اس کے لئے”درس نظامي“ سے زيادہ علم درکار ہے?
سچ يہ ہے کہ پورا عالم اسلام اپنے اصل حريف سے واقف ہي نہيں کيونکہ يہ”اصل آقاؤں“ کے غلاموں کے غلاموں کے غلاموں کے غلاموں کے سايوں اور پرچھائيوں کا غلام ہے? ان کے حکمرانوں اور فکري و مذہبي ليڈروں کي بھي عموما دو ہي صفات ہيں ،اول جہالت دوم عياشي? يہ تو اتني استعداد بھي نہيں رکھتے کہ وضاحت سے پيش کي گئي کسي بات کو سمجھ بھي سکيں اس لئے ”امريکہ کي غلامي سے نجات“ …”ڈرون حملے بند کرو“ ”امريکہ عراق کے بعد افغانستان ميں بھي شکست کھا چکا“ وغيرہ وغيرہ وغيرہ جيسي لغويات و فروعات کے علاوہ ان کے پلے ہي کچھ نہيں کہ فکري ديواليہ پن اس دنيا سے باخبر ہي نہيں جس ميں ايڑياں رگڑ رہا ہے……شايد يہ سب پچھلے جنم ميں کنوئيں کے مينڈک تھے?
آخر پر چندRevealing quotesجن سے اندازہ لگايا جا سکتا ہے کہ صيہونيت ہے کيا؟ عہد حاضر ميں اس کا کردار کتنا فيصلہ کن ہے؟ اور اس دنيا کي بنت کس قسم کي ہے؟ اور ان کا مائنڈ سيٹ کيا ہے؟ غور سے پڑھو اور ہوش کرو?
"We Jews regard our race as superior to all humanity ,and look forward not to its ultimate union with other races ,but to its triumph over them"
گولڈ ون سمتھ يہودي پروفيسر آف ماڈرن ہسٹري آکسفورڈ يونيورسٹي اکتوبر 81دوسرا پيغام بلکہ تھيٹر ملا حظہ فرمائيے?
"Why are gentiles needed? they will work ,they will plow,The will reap and we will sit like an effendi (Turkish Bossman)and eat.That is why gentiles were created"
Rabbi ova dia, Mentor of TRFP
"The modern Jew is the product of the Talmud"
 Michael Rodkinson)
" The wholw fortune of nations will pass into the hand of the Jewish people:
(Isdor Loeb)
پڑھتا جا… شرماتا جا اور کچھ نہ سيکھنے سمجھنے کي قسم بھي کھا کہ جہالت جيسي راحت کوئي نہيں! کيوں مولانا کيا خيال ہے؟
ايک ہي موضوع پر اوپر نيچے چار کالم……آپ بھي بور ہوئے ہوں گے کيونکہ ميں بھي خاصا بيزارہوا ہوں ليکن کيا کرتا کہ موضوع ہي اتنا نازک اور حساس کہ اس پر چار کيا چار ہزار کالم بھي لکھے جائيں تو کم ہيں? مسئلہ حل ہو نہ ہو ليکن ميري شديد ترين خواہش رہي ہے کہ لوگ اتنا تو جان جائيں کہ مسئلہ ہے کيا؟ علاج تو بہت بعد کي بات ہے ہميں تو يہي خبر نہيں کہ ہمارا مرض کيا ہے؟جب کوئي يہ کہتا ہے کہ ہم فلاں يا ڈھمکاں کے غلام ہيں تو مجھے ان کي عقلوں پر رونا آتا ہے کہ يہ جن کو اپنے ”آقا“ ہونے کا اعزاز بخشتے ہيں وہ تو خود کسي اور کے غلام ہيں? ہمارے سميت يہ دنيا اگر کسي کي غلام ہے تو وہ کوئي ملک نہيں بلکہ نظام در نظام اک ايسا”گلوبل نظام“ ہے جو اس دنيا پرمسلط کيا جاچکا ہے? يہ”گلوبل نظام“ کيا ہے؟ اور کن لوگوں نے اسے کرہ ارض پر مسلط کيا؟ گزشتہ چار کالموں ميں اسي کي طرف چند اشارے کئے گئے? بے شمار فون کالز کے جواب ميں اس
موضوع پر آخري بات اک سادہ سے سوال کي صورت ميں کروں گا کہ کيا ہمارے پيارے”عمامہ، جبہ و دستار“ نے کبھي سوچا کہ……دنيا کا موجودہ ”مالياتي اور اقتصادي نظام“ کس کي”ايجاد“ …کس کي”اختراع“ اور کس کا ”کارنامہ“ ہے؟ اور يہ نظام بني نوع انسان کے ساتھ کيا کچھ کررہا ہے کہ مسلمان تو بني نوع انسان کا ايک جزو ہي ہيں ناں اور ان پر يہ نظام کچھ زيادہ تر” مہربان“ اس لئے ہے کہ اول ان کے پاس اک اپنا ضابطہ حيات ہے جو اور کسي کے پاس نہيں، دوم يہ کہ ان کي تعداد بھي بہت زيادہ ہے اور ان کے ملک بھي جو اور کسي کو ميسر نہيں? اس بات کي تکرارکرتے اک عمر گزر گئي کہ مسلمان سائنس اور ٹيکنالوجي پر فوکس کريں ليکن اب محسوس ہوتا ہے کہ وقت ہي برباد کيا کہ مسلمان تو صديوں ميں ايسے چند ماہرين اقتصاديات بھي پيش نہ کرسکے جو صيہونيت کے مسلط کردہ مالياتي و اقتصادي نظام کا متبادل قابل عمل ماڈل بناتے اور عالم اسلام يکسوئي کے ساتھ اسے اپنانے اور پريکٹس کرنے کے بعد اک دليل کے طور پر اسے دنيا کے سامنے پيش کرتا کہ يہ ہے مالياتي واقتصادي نظام کا اسلامي ماڈل ?



Also read:
  1. The Thirteenth Tribe 
  2. The Protocols of the elders of Zion
  3. Pawns in the Game
  4. Zionism, Bible & Quran
  5. http://en.wikipedia.org/wiki/Conspiracy_theories
  6. Conspiracy Theories in Muslims: http://wikiislam.net/wiki/Muslim_Conspiracy_Theories
  7. Top 10 Conspiracy Theories USA
  8. Financial System, Jewish Perspectivehttp://www.jewishencyclopedia.com/articles/6116-finance
  9. Capitalism-and-islam-what-is-difference?
  10. Capitalism: A Ghost Story: by Arundhati Roy, India : Is it a house or a home? A temple to the new India, or a warehouse for its ghosts? Ever since Antilla arrived on Altamount Road in Mumbai, exuding mystery and quiet menace, things have not been the same. “Here we are,” ...




Sunday, August 26, 2012

Imran Khan Rejects US Drone Attacks in FATA




پاکستان کے قبائلي علاقوں پر ڈرون حملوں کے خلاف احتجاج کے لئے امريکہ کے ايک سينئر سفارتکار کي طلبي کے اگلے ہي روز امريکہ نے ان حملوں ميں مزيد شدت پيدا کرتے ہوئے جوابي کارروائي کے طور پر شمالي وزيرستان پر مزيد چھ ڈرون حملے کر ديئے جن ميں 18افراد  ....

Friday, August 24, 2012

Americans penetrate TTP Taliban in large numbers to create anarchy and control Pak Nuclear Weapons

Americans planned 10 years back to infiltrate ranks of Taliban with 10,000 well trained US soldiers to destabilise Pakistan, control Af-Pak and central Asia . These American are well trained, they speak Pushto, wear Pushtun dress. Recent terrorist may be their work along with local Talibans, who are mislead and deceived to  play as tool in their hands. Americans want to keep Pakistan weak, show to the world that Pakistan [only Nuclear Muslim power]

is too weak to keep nuclear weapons safely which can fall in to the hands of terrorists. They also want to keep control over vast oil fields of Caspian sea / central Asia  which is 7 times more than oil of Middle East. This was written by Frederick Forsyth 10 years ago in his fictional novel, which appears to be a reality now. The Lawrence of Arabia - replay on grand scale.....
Attack on strategic targets like Mehran Naval Base and now at PAF Kamrah indicate the selection of targets and intelligence, money, technology and training which USA could provide. The foot soldiers are normally local misguided indoctrinated fools. Sectarian killing is well organised like replay of Shia-Sunni split in Iraq. In reality there is no sectarianism among people of Pakistan, which has a Shia President Asif Ali Zardri and Bhutto family.
Zardari and Haqqani provided visas to hundreds of Americans like Raymond Davis who are no more traceable, powerful Military and ISI also kept quiet reason unknown making little noise appears just to keep record right; 'we said so, I told you that'.

'THE AFGHAN' is a chilling story of modern terrorism from the grandmaster of international intrigue. T he Day of the Jackal, The Dogs of War, The Odessa File-the books of Frederick Forsyth have helped define the international thriller as we know it today. Combining meticulous research with crisp narratives and plots as current as the headlines, Forsyth shows us the world as it is in a way that few have ever been able to equal. And the world as it is today is a very scary place. When British and American intelligence catch wind of a major Al Qaeda operation in the works, they instantly galvanize- but to do what? They know nothing about it: the what, where, or when. They have no sources in Al Qaeda, and it's impossible to plant someone. Impossible, unless . . . The Afghan is Izmat Khan, a five-year prisoner of Guant namo Bay and a former senior commander of the Taliban. The Afghan is also Colonel Mike Martin, a twenty-five-year veteran of war zones around the world-a dark, lean man born and raised in Iraq. In an attempt to stave off disaster, the intelligence agencies will try to do what no one has ever done before-pass off a Westerner as an Arab among Arabs-pass off Martin as the trusted Khan. It will require extraordinary preparation, and then extraordinary luck, for nothing can truly prepare Martin for the dark and shifting world into which he is about to enter. Or for the terrible things he will find there. Filled with remarkable detail and compulsive drama, The Afghanis further proof that Forsyth is truly master of suspense. [A book review]

War of Terror or Error - Great Debate [URDU]

دہشت گردی یا غلطی کی جنگ - عظیم بحث

An interesting Debate/Discussion [URDU] analyzing the of Pakistan in War of Terror, the weak areas and how best should it be conducted. Iftikhar Ahmad and Hamid Mir conduct the debate with intellectuals form all the main segments of Pak society......

Rise of the Tehrik-i-Taliban Pakistan


FATA (Federally Administered Tribal Areas) (Pashtoمرکزي قبایلي سیمې) is a semi-autonomous tribal region in the northwest of Pakistan, lying between the province ofKhyber PakhtunkhwaBalochistan, and the neighboring country of Afghanistan. FATA comprises seven Agencies (tribal districts) and six F.Rs (Frontier regions). The territory is almost exclusively inhabited by Pashtun tribes which are predominantly Sunni Muslims by faith. The total population of the FATA was estimated in 2000 to be about 3,341,070 people, or roughly 2% of Pakistan's population. Only 3.1% of the population resides in established townships. It is thus the most rural administrative unit in Pakistan.
The region was annexed in the 19th century during the British colonial period, and though the British never succeeded in completely calming unrest in the region, it afforded them some protection from Afghanistan. The British Raj attempted to control the population of the annexed tribal regions with the Frontier Crimes Regulations (FCR), which allowed considerable power to govern to local nobles so long as these nobles were willing to meet the needs of the British. Due to the unchecked discretionary power placed into the hands of the jirga put into place by these nobles and to the human rights violations that ensued, the FCR has come to be known as the "black law." The annexed areas continued under the same governance after thePartition of India, through the Dominion of Pakistan in 1946 and into the Islamic Republic of Pakistanin 1956.
According to the United States Institute of Peace, the character of the region underwent a shift beginning in the 1980s with the entry into the region of the Mujahideen and CIA Operation Cyclone, against the Soviet Union prior to the fall of the Berlin Wall and collapse of Soviet Union.

The FATA are bordered by: Afghanistan to the west with the border marked by the Durand Line, Khyber-Pakhtunkhwa to the north and east, Punjab and Balochistan to the south.

The seven Tribal Areas lie in a north-to-south strip that is adjacent to the west side of the six Frontier Regions , which also lie in a north-to-south strip. The areas within each of those two regions are geographically arranged in a sequence from north to south.

The geographical arrangement of the seven Tribal Areas in order from north to south is: BajaurMohmandKhyberOrakzaiKurram,North WaziristanSouth Waziristan. The geographical arrangement of the six Frontier Regions in order from north to south is: Peshawar, Kohat, Bannu, Lakki Marwat, Tank, Dera Ismail Khan.
The Federally Administered Tribal Areas consists of two types of areas i.e. Agencies (Tribal Districts) and F.Rs (Frontier Regions). FATA has seven Tribal Agencies and Six F.Rs. These are (in order, from North to South):

Rise of the Tehrik-i-Taliban Pakistan

In 2001, the Pakistani Taliban and al-Qaeda began entering into the region. In 2003, Taliban and al-Qaeda forces sheltered in the FATA began crossing the border into Afghanistan, attacking military and police. Shkin, Afghanistan is a key location for these frequent battles. This heavily fortified military base has housed mostly American special operations forces since 2002 and is located just six kilometers from the Pakistani border. It is considered the most dangerous location in Afghanistan. With the encouragement of the United States, 80,000 Pakistani troops entered the FATA in March 2004 to search for al-Qaeda operatives. They were met with fierce resistance from Pakistani Taliban.It was not the elders, but the Pakistani Taliban who negotiated a truce with the army, an indication of the extent to which the Pakistani Taliban had taken control. Troops entered the region, into South Waziristan and North Waziristan eight more times between 2004 and 2006 and faced further Pakistani Taliban resistance. Peace accords entered into in 2004 and 2006 set terms whereby the tribesmen in the area would stop attacking Afghanistan and the Pakistanis would halt major military actions against the FATA, release all prisoners, and permit tribesmen to carry small guns.In 2007 the Pakistani Taliban in FATA became officially known under the name Tehrik-i-Taliban Pakistan
These Takfiri Taliban consider other Muslims who do not adhere to their fanatical distorted, heretic  views as infidels to justify indiscriminate killing. They have invented their own religion tarnishing the image of Islam. TTP has declared war against state of Pakistan and its people, attacking military installations, killing innocent people, children, women, young and old. Their terrorist acts only help enemies of Islam, Pakistan and Muslims. It is evident they are playing in the hands of Indians, Israelis and CIA /USA knowingly in unknowingly, who provide them with money, weapons, technology and intelligence to achieve their nefarious designs against the Only Muslim Nuclear power Pakistan. [More at http://en.wikipedia.org/wiki/Tehrik-i-Taliban_Pakistan]

Pakistan’s new Waziristan strategy

On June 4, 2007, the National Security Council of Pakistan met to decide the fate of Waziristan and take up a number of political and administrative decisions to control "Talibanization" of the area. The meeting was chaired by President Pervez Musharraf and it was attended by the Chief Ministers and Governors of all four provinces. They discussed the deteriorating law and order situation and the threat posed to state security. To crush the armed militancy in the Tribal regions and Khyber-Pakhtunkhwa, the government decided to intensify and reinforce law enforcement and military activity, take action against certain madrassahs, and jam illegal FM radio stations.
US Drone attacks have killed only 1% militants, 99% innocent civilians, drawing string reaction and tribal revenge attacks in Pakistan killing over 30,000 civilians.
Described as the "most dangerous place on the earth" Pakistan’s tribal areas have witnessed ever increasing carnage. According to partial data compiled by the South Asia Terrorism Portal (SATP), a total of 5,023 persons, including of 4,296 militants, 490 civilians and 237 SF personnel, were killed in 672 incidents of killing in 2010 (all data till December 12), as compared to 5,238 persons, including 4,252 militants, 636 civilians and 350 SFs killed in 835 incidents of killing in 2009. This indicates is a decline of 23 and 32.3 percent respectively in the number of civilians and SFs killed in 2010, as compared to 2009. Militants’ fatalities, on the other hand, have risen marginally. The number of major incidents (involving three or more killings) has decreased from 383 in 2009 to 369 in 2010.
More>>>>>> http://en.wikipedia.org/wiki/Tehrik-i-Taliban_Pakistan


    A new report from the Conflict Monitoring Centre (CMC) has reported that 2043 Pakistanis have been slain in CIA drone strikes in the past 5 years, with the vast majority of them innocent civilians. 

    Self Reliance must of Pakistan


    WebpageTranslator



    "Reducing dependence on US and West is as critical as revamping its security and intelligence infrastructure: 
    Tariq Osman Hyder 


    Extremists and terrorists project the Pakistani armed forces as American surrogates to justify violence and generate sympathy. Civilians, who bear the brunt of such terrorist attacks, blame both the government and military for sacrificing them to its pro-US policy.
    The American intrusion into Pakistani territory to kill Osama Bin Laden has created the internal consensus that Pakistan needs to put its house in order, improve internal security and manage relations with the US, India and Afghanistan while respecting public opinion.
    The attack on the naval airbase in Karachi on Sunday — costing valuable lives and destroying vital defence assets — does not change these imperatives but underlines the fact that the security apparatus needs drastic improvement.
    The American occupation of Afghanistan, their refrain that Pakistan do more in the war on terror, augmented drone strikes and avowals to repeat intrusions for high-value targets suspected to be in Pakistan, all erode support for the Pakistani government and the armed forces.
    Extremists and terrorists project the Pakistani armed forces as American surrogates to justify violence and generate sympathy. Civilians, who bear the brunt of such terrorist attacks, blame both the government and military for sacrificing them to its pro-US policy.
    India exacerbates the situation by demanding that Pakistan tackle terrorism more effectively while denying it the space to do so, with its military projecting aggressive doctrines and claiming an ability to mount incursions into Pakistan.
    One hopes that America and India realise the counter-productivity of their attitudes and actions which clearly contradict their proclaimed objective of a stable Pakistan. However, Pakistan has to deal with the situation as it is, not as it should be.
    Many steps should be taken on the security front. Escalating terrorist attacks on the armed and security forces aim to demoralise, discredit and destabilise. No doubt, foreign funding plays an important part. However, this does not absolve the government and its security institutions from taking radical action to reverse Pakistan's soft state image.
    The management, control and data collection of people and money entering Pakistan and within Pakistan must be undertaken by utilising the existing National Database and Registration Authority infrastructure.
    American and Afghan demands that infiltration from Pakistan be curtailed, which in fact has become a two-way process, need to be met by fencing the Pakistan-Afghan border. Terrorists and criminals should be dealt with by strictly controlling the limited road routes into Pakistan.
    Intelligence agencies everywhere tend not to share information; but the time has come for the Pakistani intelligence agencies and police, which have the largest footprint, to work effectively together. The Bin Laden episode and naval base attack reflect a major failure not just of the military intelligence agencies, but also of the civilian intelligence establishment and police.
    All of them should be equally built up as counterweights for better future results. Often intelligence agencies are used as sinecures for retirees. As in other developing countries, police recruitment is frequently used to satisfy political quotas.
    This needs to be changed. The intelligence agencies should be staffed largely by civilian officers with ability and integrity, retained for the duration of their careers, to create a dedicated capability. This would result in the military agencies' backbone being composed of career civilians rather than short term military officers.
    Surveillance
    The physical perimeter of all important facilities should be increased wherever possible, and actual/electronic surveillance improved as was expected after the 2009 attack on Army Headquarters in Rawalpindi. Vulnerable facilities should be moved to less built-up areas as done elsewhere.
    Apart from the need to revisit the entire security structure, there is the challenge for the government and the armed forces to take the people of Pakistan along. This requires revision of governance including foreign policy and economic assistance from abroad.
    Without improving the economy through broadening the tax base, infrastructural development, better and widespread education and creating more jobs, growing popular discontent which feeds extremism and terrorism, will not be reversed.
    As regards foreign policy, ‘leverage' is not all in American hands as long as they are in Afghanistan. While this factor should not be overestimated, the American, Nato and ISAF logistics supply chain goes largely overland through Pakistan and, what is forgotten, almost all air supplies use Pakistan's airspace. It is time that the air-transit facility was changed from block sanction to a flight-by-flight permission procedure as is done internationally.
    Despite Pakistan's partial dependence on American military and economic assistance, a more independent position can be taken without confrontation. If the economy is improved, along with rising workers' remittances and higher wheat, rice and cotton harvests, Pakistan could wean itself away from American aid flows, likely to decline in any case due to the recession and renewed Congressional opposition; and from an IMF programme with restrictive conditions.
    While combating terrorism, the government and the military should work in this direction, beyond institutional and party concerns. This is what Pakistanis expect and deserve.

    By Tariq Osman Hyder, a retired Pakistani diplomat, Special to Gulf News.