Featured Post

Terrorism and solution? دہشت گردی اور اس کا حل جوابی بیانیہ ؟

اِس وقت جو صورت حال بعض انتہا پسند تنظیموں نے اپنے اقدامات سے اسلام اور مسلمانوں کے لیے پوری دنیا میں پیدا کر دی ہے، یہ اُسی فکر کا...

Friday, September 21, 2012

The Prophet Muhammad: Mercy for Creations


وَمَا أَرْسَلْنَاكَ إِلَّا رَحْمَةً لِّلْعَالَمِينَ
اے محمدؐ، ہم نے جو تم کو بھیجا ہے تو یہ دراصل دنیا والوں کے حق میں ہماری رحمت ہے
We sent thee not, but as a Mercy for all creatures[Quran;21:106]

إِنَّ اللَّـهَ وَمَلَائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ ۚ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا
اللہ اور اس کے ملائکہ نبیؐ پر درود بھیجتے ہیں، اے لوگو جو ایمان لائے ہو، تم بھی ان پر درود و سلام بھیجو
"Verily, God and His angels bless the Prophet: [hence,] O you who have attained to faith, bless him and give yourselves up [to his guidance] in utter self-surrender!" [Qura'n;33:56]

Allah's Messenger was the kindest of men in the same way as he excelled all others in courage and valour. Being extremely kind-hearted, his eyes brimmed with tears at the slightest sign of inhumanity. A Companion, 'Shaddaad bin 'Aws' reported the Apostle as saying: "Allah has commanded you to show kindness to everyone, so if you have to kill, kill in a good manner, and if you slaughter an animal, slaughter it gently. If anyone of you has to slay an animal, he should sharpen the blade first and treat the animal well." Continue reading >>>>>

Monday, September 17, 2012

Rebutal: Anti Islam Video from USA


On the pretext of freedom of speech USA and West allows the extremists to insult Islam, Quran and Prophet Muhammad [peace be upon him]. They are well aware that this will hurt the feelings of 1.5 billion Muslims, the world over who can not bear any non sense on the pretext of freedom of speech. On the other side In … Continue reading »

Sunday, September 16, 2012

Ignorance is Curse

“.. Are the knowledgeable and the ignorant equal? In fact, none will take heed except the people of understanding.”(Qur’an;39:9).

Ignorance is the curse which leads to darkness and destruction. This was realised by Plato, 2400 years ago. ‘The ‘Allegory of the Cave’, also known as ‘The Cave Analogy‘, ‘Plato’s Cave’ or the ‘Parable of the Cave’, is an allegory used by the Greek philosopher Plato in his work The Republic to illustrate “our nature in its education and want of education”.  The Allegory of the Cave is presented after themetaphor of the sun and the analogy of the divided line . Socrates describes a group of people who have lived chained to the wall of a cave all of their lives, facing a blank wall. The people watch shadows projected on the wall by things passing in front of a fire behind them, and begin to ascribe forms to these shadows. According to Socrates, the shadows are as close as the prisoners get to viewing reality. He then explains how the philosopher is like a prisoner who is freed from the cave and comes to understand that the shadows on the wall are not constitutive of reality at all, as he can perceive the true form of reality rather than the mere shadows seen by the prisoners.
This is illustrated in following videos:

Brief
Socrates begins by describing a scenario in which what people take to be real would in fact be an illusion. He asks Glaucon to imagine acave inhabited by prisoners who have been chained and held immobile since childhood: not only are their arms and legs held in place, but their heads are also fixed, compelled to gaze at a wall in front of them. Behind the prisoners is an enormous fire, and between the fire and the prisoners is a raised walkway, along which people walk carrying things on their heads “including figures of men and animals made of wood, stone and other materials”. The prisoners watch the shadows cast by the men, not knowing they are shadows. There are also echoes off the wall from the noise produced from the walkway.
Socrates suggests the prisoners would take the shadows to be real things and the echoes to be real sounds, not just reflections of reality, since they are all they had ever seen or heard. They would praise as clever whoever could best guess which shadow would come next, as someone who understood the nature of the world, and the whole of their society would depend on the shadows on the wall.

Release from the cave: Socrates next introduces something new to this scenario. Suppose that a prisoner is freed and permitted to stand up. If someone were to show him the things that had cast the shadows, he would not recognize them for what they were and could not name them; he would believe the shadows on the wall to be more real than what he sees. “Suppose further,” Socrates says, “that the man was compelled to look at the fire: wouldn’t he be struck blind and try to turn his gaze back toward the shadows, as toward what he can see clearly and hold to be real? What if someone forcibly dragged such a man upward, out of the cave: wouldn’t the man be angry at the one doing this to him? And if dragged all the way out into the sunlight, wouldn’t he be distressed and unable to see “even one of the things now said to be true,” viz. the shadows on the wall?

After some time on the surface, however, Socrates suggests that the freed prisoner would acclimate. He would see more and more things around him, until he could look upon the Sun. He would understand that the Sun is the “source of the seasons and the years, and is the steward of all things in the visible place, and is in a certain way the cause of all those things he and his companions had been seeing”.

Return to the cave:Socrates next asks Glaucon to consider the condition of  this man. “Wouldn’t he remember his first home, what passed for wisdom there, and his fellow prisoners, and consider himself happy and them pitiable? And wouldn’t he disdain whatever honors, praises, and prizes were awarded there to the ones who guessed best which shadows followed which? Moreover, were he to return there, wouldn’t he be rather bad at their game, no longer being accustomed to the darkness? “Wouldn’t it be said of him that he went up and came back with his eyes corrupted, and that it’s not even worth trying to go up? And if they were somehow able to get their hands on and kill the man who attempts to release and lead up, wouldn’t they kill him?”

Remarks on the allegory: Socrates remarks that this allegory can be taken with what was said before, viz. the metaphor of the Sun, and the divided line. In particular, he likens

“the region revealed through sight” – the ordinary objects we see around us – “to the prison home, and the light of the fire in it to the power of the Sun. And in applying the going up and the seeing of what’s above to the soul’s journey to the intelligible place, you not mistake my expectation, since you desire to hear it. A god doubtless knows if it happens to be true. At all events, this is the way the phenomena look to me: in the region of the knowable the last thing to be seen, and that with considerable effort, is the idea of good; but once seen, it must be concluded that this is indeed the cause for all things of all that is right and beautiful – in the visible realm it gives birth to light and its sovereign; in the intelligible realm, itself sovereign, it provided truth and intelligence – and that the man who is going to act prudently in private or in public must see it”.
After “returning from divine contemplations to human evils”, a man “is graceless and looks quite ridiculous when – with his sight still dim and before he has gotten sufficiently accustomed to the surrounding darkness – he is compelled in courtrooms or elsewhere to contend about the shadows of justice or the representations of which they are the shadows, and to dispute about the way these things are understood by men who have never seen justice itself?” [Courtesy/Source: http://en.wikipedia.org/wiki/Plato's_Cave]

Conclusion:
God loves His creation, He has been selecting prophets among the ignorant people for their guidance. He enlightened the prophets with the light of His knowledge. Some are Noah, Abraham, Moses, Jesus Christ  and Muhammad [peace be upon them all]. Some people listened to them while others mocked them,  even  tried to kill some prophets. Some people followed the prophets, but the scholars responsible for it,  altered the message after prophets were gone. Finally God delivered His final message, Qura'n through last prophet, God took responsibility upon Himself for its protection. Its a matter of choice for humanity to remain ignorant, live in the darkness like ‘prisoners of the cave’ or listen and follow the last message of guidance for salvation, still available in original revealed form! Unfortunately some Muslims ignore the clear instructions of Qura'n, kill innocent people called Takfiri Taliban, they need to study Qura'n to comprehend the message clearly. The triliteral root ʿayn lām mīm (ع ل م) occurs 854 times in the Quran, in 14 derived forms, if exclude 73 times as the noun ʿālamīn (عَٰلَمِين) for World/Worlds, at remaining 781 places it is used in the meanings of  'Knowledge Know, teach, taught, learn & for God as 'All Knower, All Knowing'.
Read More:
  1. Learning & Science
  2. http://quran-pedia.blogspot.com
  3.  Universe, Science & God
  4.  Faith & Reason
  5. Humanism or Atheism
  6. Islam & Philosophy
  7. Metaphysics: Al-Ghaib

Saturday, September 15, 2012

New Fitnah- Anti Islam Film


On the pretext of freedom of speech USA and West allows the extremists to insult Islam, Quran and Prophet Muhammad [peace be upon him]. They are well aware that this will hurt the feelings of 1.5 billion Muslims, the world over who can not bear any non sense on the pretext of freedom of speech. On the other side In … Continue reading » 
ناراضی ظاہر کرنے کا ایک طریقہ ملائیشیا میں سولہ غیر سرکاری تنظیموں نے اختیار کیا۔ انہوں نے اپنے بیس نمائندے بھیج کر امریکی سفارت خانے کو ایک میمورینڈم دیا، پیغام ان کا بھی یہ ہی تھا کہ انہیں اسلام کی توہین قبول نہیں ہے، بس انداز ذرا مختلف تھا اس لیے کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا

http://dunya.com.pk/?key=VjFjeE1HTXhTbGRSYkZaVFZrWmFURmxzVlRGaU1YQkdXa1prVkdKRmNFWlVWbVIzWVZVeGRWb3phRnBpUlRWb1dWY3hTMUl3T1ZsUmJVWlRVa1ZKTUZaRVJsTlNNWEJ5VDFWV2FFMHlhRkJXYTJScVpERlNkR05HV210V01Gb3hWVmN3TUZCUlBUMD0=

Wednesday, September 12, 2012

Sallafis, Takfiris, CIA and RAW Joined Hands


Takfiris Sallafis are rather recently emerged sects, originating from Saudi Arabia and said to be an "improvement" over the well known Wahhabi. Both of these two sects want to ensure that every Muslim must go to Heaven, as they claim to be Muslims, themselves. However, the method of ensuring is somewhat rough and unique to themselves and not what the Islam teaches. They both want, firstly all Muslims to start thinking, living, behaving in a way they preach, demand, not necessarily follow; and secondly, to quickly despatch those who do not fit in their perception of being Muslims to the next world. Method of despatch is usually slaughter to strike terror in the hearts of all. 
Sallafis are trying to kill every Shia, not only in Pakistan but also in Afghanistan as they consider them 'non-believers'. Takfiris also believe that all Muslims not fitting their own description of being a Muslim must be despatched to the next world. The master mind of Parade Lane's attack on the mosque in Rawalpindi, where from children to elderly were praying to Allah, was asked if he had any remorse of killing people at Juma Prayers, including children. His answer was, sending "munafiqeen" to death was the right thing to do, earlier the better. He had no regrets.*
Ahsan, spokesperson of TTP has told journalists that the Tehrik was not interested in US leaving Afghanistan, or Pak Army's operations or otherwise; it only wants enforcement of Sharia in Pakistan, by them. Shariah of their perceptions. Any disagreement will be met with death to the  dissenting or non-complying men, women, children, all.
Those who talk of "negotiating with TTP" are taking the nature of TTP in consideration. Taliban, are not simple Pashtuns, following age old Pashtunwali.They are nowhere near Pashtunwali.
This group, or for that matter all militants, insurgents and active supporters of militancy/extremism in the name of Islam are gone past the stage of negotiating. TTP has been very cleverly high jacked by CIA and RAW handlers. That is clearly betrayed by the selection of targets, types of munition, supply of most modern and expensive force multipliers that they employ for sabotage and terrorism. 
All military actions ( or terror actions as they fall in the category of violence and thus are indeed military actions) are meant to create effects. The smaller effects limited in Time and Space are called Tactical, major effects are called Operational and the effects which can influence the capability of war waging are called Strategic Effects. The TTP has been
trying to create strategic effects by their attacks. Who is so qualified to pick up their targets, timings, night vision devices, satellite pictures and a range of multiple weapons suited for creating strategic effects? Who procures and pays-for this very expensive and not available off-the-shelf military hardware?The Mullahs? These are professionals from RAW and CIA with some hand of Mossad also. US and Indian tax-payers are the ultimate paymasters.
Now in this scenario, Imran Khan wants to visit NW! He has some well known attributes;  known to be a liberal, honest patriot, a ray of hope for most Pakistanis who are fed up with the two known parties and their coalition partners. He personifies a breath of fresh air for Pakistanis. However, Imran Khan also qualifies even from Sallafi/Takfiris perspective, but not as a prospective future leader, but as a target to be killed. 
Then there are enemies of Pakistan, who have been trying their best to foment insurgency in Balochistan and FATA,  killing Chinese engineers working on projects in Pakistan, all with a view to destabilise and isolate Pakistan to achieve their strategic objectives. Would they let a new leader emerge who sounds sincere to Pakistan and is audacious enough to stand up to the bullies? They will ensure that through the TTP Imran Khan is killed. Did't they get Benazir killed?*
Imran Khan can be accompanied by a million people, but against suicide bombing and IEDs the defences start crumbling. A succession of determined suicide bombers WILL reach the target.
Will someone council Imran Khan, please?*

Tuesday, September 11, 2012

مسلح اسلامی تحریکیں اور ریاستی نظام...ڈاکٹرحسن عسکری in Armed Rebellious Groups in Muslim world

11ستمبر 2001ء کو رونما ہونے والی دہشت گردی کو گیارہ سال گزر چکے ہیں۔ اس عرصہ میں ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں دہشت گردی کا نیا واقعہ نہیں ہوا لیکن باقی دنیا کے متعلق یہ بات نہیں کہی جا سکتی ۔ دنیا میں انتہا پسندی اور دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے ۔ امریکہ اور کچھ دوسرے ممالک نے انتہا پسندی اور دہشت گردی میں ملوث تنظیموں اور افراد کیخلاف کارروائیاں کیں اور کچھ کو غیر موثر کیا لیکن انتہا پسندی اوردہشت گردی کے رجحانات کا خاتمہ نہ ہو سکا۔
انتہا پسندانہ مذہبی اور معاشرتی سوچ بدلنے اورتشدد اور دہشت گردی کو استعمال کرنے والی تحریکیں اور تنظیمیں غیر ریاستی ہیں جو کہ مسلمان اکثریت والے ممالک یا ایسے ممالک میں سرگرم ہیں جہاں مسلمانوں کی بڑی آبادی موجود ہے ۔ یہ تحریکیں ایک مذہبی اور سیاسی ایجنڈے کے حوالے سے کام کرتی ہیں اور اسلام کی ایک مخصوص سوچ اور توضیح کے علم بردار ہونے کا دعویٰ کرتی ہیں۔ اپنے آپ کو صحیح اسلام کا علم بردار تصور کرتے ہوئے جبر اور قوت سے اپنی ترجیحی اسلامی سوچ کونافذ کرنے کو درست سمجھتی ہیں۔ ان تحریکوں کے قائدین غیر مسلم اور مسلم حکومتوں اور افراد کے خلاف مسلح جدوجہد کو درست سمجھتے ہیں جو ان کے خیال میں اسلام اور ان کی جدوجہد کے مخالف ہیں۔ان تحریکوں کے دو نشانے ہیں ۔اول وہ مغربی ممالک اور حکومتیں خصوصاً امریکہ جن کو وہ اسلام اور مسلمانوں کا دشمن سمجھتے ہیں ۔
دوم : ان تحریکوں نے اسلامی ممالک کی ان حکومتوں اور شہریوں کو نشانہ بنایا ہے جنہیں وہ امریکہ کا حمایتی تصور کرتی ہیں ۔ ان تحریکوں کی متحرک قیادت کی یہ کوشش بھی ہے کہ وہ اپنی مرضی کا اسلام نافذ کریں اور جو لوگ ان کی اسلامی سوچ کو قبول نہیں کرتے ان کے خلاف تشدد کا استعمال جائز سمجھتا جاتا ہے ۔
یہ تحریکیں نہ صرف امریکہ اور مغرب کی مخالف ہیں بلکہ ان کی کوشش ہے کہ اسلامی ممالک میں اپنی عملداری کو بڑھایا جائے اور علاقوں پر اپنا کنٹرول قائم کرکے اس حکومت وقت کو چیلنج کیا جائے جو ان کی بالادستی کو قبول نہیں کرتی ۔اگر امریکہ اسلامی ممالک خصوصاً افغانستان اور پاکستان سے نکل جائے تو ان تحریکوں کا صرف ایک مقصد حاصل ہوتا ہے ۔ دوسرے مقصد کا حصول باقی رہ جاتا ہے وہ یہ کہ علاقے اور حکومت پر قبضہ کرکے اپنی مرضی کا اسلام نافذ کیا جائے ۔ لہٰذا امریکہ کے افغانستان سے چلے جانے اور پاکستان میں امریکی کردار کے محدود ہونے کے بعد بھی مسلح اسلامی تحریکیں افغانستان اور پاکستان کی حکومتوں پر اپنی بالادستی قائم کرنے کے لئے جدوجہد کو جاری رکھیں گی اسی طرح یمن، سومالیہ، سعودی عرب اور دیگر عرب ریاستوں میں یہ تحریکیں حکومت وقت کو دباؤ میں رکھنے کے لئے سرگرم رہیں گی۔
اس کا مطلب یہ ہے کہ اسلامی ممالک میں انتہا پسندانہ اسلامی تحریکوں کا سلسلہ 2014ء کے بعد بھی جاری رہے گا اور متعلقہ اسلامی ممالک میں اندرونی امن اور استحکام کے مسائل موجود رہیں گے ۔
ان تحریکوں کی مذہبی اور سیاسی سوچ اسلام کے سلفی اور وہابی مکتبہ فکر سے متاثر ہے ۔ بعض اسلامی ممالک جیسے پاکستان، ہندوستان اور افغانستان میں ان مکاتب فکر سے متاثر مقامی مکاتب فکر بھی سرگرم نظر آتے ہیں ۔
جو تحریکیں مسلح جدوجہد میں مصروف ہیں وہ قوت کے استعمال کو درست سمجھتی ہیں لیکن ان مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے بہت سے علماء اور عام لوگ تشدد اور جبر کے استعمال کو درست نہیں سمجھتے آخر الذکر افراد ان تحریکوں کے طریقہ کار سے اختلاف کرنے کے باوجود ان کے مقاصد یعنی ایک مخصوص انداز کے سخت گیر اسلامی نظام سے ہمدردی رکھتے ہیں ۔
امریکہ اور مختلف اسلامی ریاستوں کی کوششوں کے باوجود مسلح اسلامی تحریکوں پر قابو نہیں پایا جا سکا۔ مستقبل قریب میں ان تحریکوں پر کنٹرول ممکن نہیں ہو گا۔
اس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ یہ تحریکیں کسی ایک جگہ سے کنٹرول نہیں ہوتیں اور نہ ہی ایک قیادت کے ماتحت کام کرتی ہیں ۔ ان تحریکوں کے آپس میں روابط ہوتے ہیں اور وہ ایک دوسرے سے تعاون بھی کرتی ہیں لیکن یہ تمام تحریکیں ایک وحدانی اکائی نہیں ہیں ۔ یہی وجہ ہے بعض مقامی تحریکوں میں جھگڑے بھی ہوتے ہیں ان تحریکوں کے طریقہ کار میں مقامی صورتحال کی وجہ سے فرق ہوتا ہے۔ ان میں سے کچھ تحریکیں زیر زمین ہوتی ہیں خصوصاً وہ جو مسلح جدوجہد میں مصروف ہوتی ہیں یا یہ تحریکیں اپنے لئے ”محفوظ خطے “قائم کرتی ہیں جن پر مقامی ریاستی حکام کا عمل دخل محدود ہوتا ہے یا بالکل نہیں ہوتا ۔ ان تحریکوں اور تنظیموں کی قیادت اپنے محفوظ علاقوں میں موثر انتظامیہ کے طور پر کام کرتی ہے جس میں متعلقہ تحریک یا تنظیم کے مسلح کارکن مقامی مذہبی رہنما اور کچھ مصلحت پسند افراد شامل ہوتے ہیں ۔
جب تک یہ تحریکیں محفوظ علاقے نہ بنائیں مسلح جدوجہد کے چلنے کا امکان نہیں ہوتا اس قسم کے محفوظ علاقے کسی ملک کی سرزمین کے ان حصوں میں قائم کئے جاتے ہیں جہاں متعلقہ ریاستی اداروں کی عمل داری نہ ہو یا ریاستی ادارے ایک پالیسی کے تحت ان کی موجودگی کو نظر انداز کرتے ہیں ۔ان تحریکوں کے قائم رہنے کی کئی اور وجوہات ہیں ۔
اول : ریاستی اداروں کی حکمرانی کی کمزوریوں کی وجہ سے بہت سے اسلامی ممالک انتظامی، معاشرتی اور اقتصادی بحران کا شکار ہیں ۔ ان ممالک کی حکومتیں انسانی مسائل کو حل کرنے میں ناکام ہیں جس کی وجہ سے ریاستی اداروں پر لوگوں کا اعتماد بہت کم ہے ۔ اس ناکامی کی وجہ سے ان حکومتوں کے لئے کافی مشکل ہے کہ وہ اسلامی تحریکوں کی اپیل کو غیر موثر کردیں ۔
دوم : ان ممالک میں تیس سال سے کم عمر کے افراد کی تعداد بہت زیادہ ہے ان کے لئے عملی زندگی کے آغاز کے مواقع بہت محدود ہیں لہٰذا ان نوجوانوں میں حکومتی اداروں اور سیاسی عمل سے عدم وابستگی کا رجحان بہت بڑھ گیا ہے ۔ ان حالات میں انہیں اسلام کے علاوہ کوئی ایسا نظریاتی فریم ورک نہیں ملتا جس کی طرف وہ متوجہ ہوں ۔ کچھ نوجوان ان تحریکوں سے منسلک ہو جاتے ہیں لیکن زیادہ تر ان تحریکوں سے علیحدہ رہتے ہوئے ان کی حمایت کرتے ہیں ۔ اس طرح ان اسلامی تحریکوں کو معاشرے میں پذیرائی اور حمایت حاصل رہتی ہے ۔
سوم : اسلامی ممالک میں بڑھتے ہوئے امریکہ مخالف جذبات نے بھی ان تحریکوں کی حمایت میں اضافہ کیا ہے ۔ امریکہ اور مغرب کی دہشت گردی کے خاتمہ کی پالیسی نے کئی ممالک خصوصاً افغانستان اور پاکستان میں عام آدمی کی مشکلات میں اضافہ کیا ہے جس کی وجہ سے لوگوں (خصوصاً نوجوانوں ) کی توجہ مختلف اسلامی تحریکوں کی طرف ہو گئی ہے ۔
چہارم : اسلامی ممالک میں بہت سی وجوہات کی بنا پر مذہبی قدامت پسندی کو فروغ ملا ہے اور بہت سے لوگ ملکی معاملات اور خارجہ پالیسی کو خالصتاً مذہبی انداز میں دیکھتے ہیں ۔ اس وجہ سے باقی دنیا کی طرف منفی رجحانات کو فروغ ملا ہے ۔ مغربی دنیا سے دو طرفہ بنیادوں پر تعلقات چلانا کافی مشکل ہو گیا ہے ۔ اس محدود بین الاقوامی سوچ اور مذہبی قدامت پسندی کے فروغ کی وجہ سے بھی مسلح اسلامی تحریکوں کے لئے ہمدردی میں اضافہ ہوا ہے ۔یہ مسلح اور ریڈیکل اسلامی تحریکیں کئی اسلامی ممالک کی حکومتوں کو چیلنج کرسکتی ہیں ۔ تشدد اور دہشت گردی سے خوف وہراس اور غیر یقینی صورتحال پیدا کر سکتی ہیں لیکن آج کے جدید دور میں ریاستی نظام چلانے کی صلاحیت نہیں رکھتیں۔
وہ اسلامی ممالک جہاں یہ تحریکیں سرگرم ہیں ایک ایسے مشکل دور سے گزر رہے ہیں جس کاخاتمہ عنقریب نظر نہیں آتا ۔ یہ تحریکیں مکمل طور پر کامیاب نہیں ہوں گی اور نہ ریاستی نظام کو سکون سے چلنے دیں گی۔ اس طرح اسلامی دنیا اندرونی خلفشار اور سیاسی اور مذہبی کشمکش کا شکار رہے گی۔ ان مشکلات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے مغربی ممالک اسلامی ممالک پر سفارتی اور اقتصادی دباؤ قائم رکھ سکیں گے ۔
http://search.jang.com.pk/NewsDetail.aspx?ID=21755

گیارہ برس گزر گئ 9/11 Eleven years after

گیارہ برس گزر گئے۔ کامل گیارہ برس!!
دنیا کی تاجداری اور اقوام عالم پر سواری کا خواب دیکھنے والے امریکہ کے دل و دماغ میں خودشناسی کا کوئی شائبہ اور خود احتسابی کی ذرا سی رمق بھی ہوتی تو وہ گراؤنڈ زیرو پر روایتی تقریب کو ایک بھرپور جائزے کے لئے استعمال کرتا اور اپنے آپ سے پوچھتا کہ نیویارک کے دو بلند میناروں کے ملبے سے سر اٹھانے والے کروسیڈ نے دنیا کی واحد سپر پاور کے عارض و رخسار کتنے نکھارے اور اس کی پیشانی پر کتنے بدنما دماغ چھوڑ گیا؟ لیکن ایسا نہیں ہوگا۔ اللہ تعالیٰ نے ہر عہد کے فرعونوں کے لئے کچھ سزائیں تجویز کر دی ہیں۔ ان سزاؤں میں سے ایک سزا یہ بھی ہے کہ خودسر اور خدا فراموش قبیلوں کی آنکھوں پہ پٹیاں بندھ جاتی ہیں، ان کے کان قوت سماعت سے محروم کر دیئے جاتے ہیں اور ان کے دلوں پر مہریں لگا دی جاتی ہیں۔ میں امریکی عوام کو خلائی مخلوق کہا کرتا ہوں۔ نائن الیون کے کوئی ایک سال بعد جنوبی ایشیاء سے جن چھ صحافیوں کو خصوصی دعوت پر امریکہ بلایا گیا، ان میں میں بھی شامل تھا۔ تب مجھے اس سادہ و بے نیاز خلائی مخلوق کی بے خبری کا اندازہ ہوا تھا جسے اس کے عیار حکمران ہمیشہ بے خبر رکھتے اور اپنے مکروہ عزائم کے لئے اس کے ذہن مسخ کرتے رہتے ہیں۔
گزشتہ روز صدر بارک اوباما نے کسی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔ ”اب وہ پیسہ جو جنگوں پر خرچ نہ ہونے کے باعث بچے گا، ہم قرضوں کی ادائیگی، زیادہ سے زیادہ لوگوں کو روزگار کی فراہمی اور سڑکوں، پلوں، اسکولوں اور رن ویز کی تعمیر پر خرچ کریں گے۔ دو جنگوں کے بعد، جن میں ہزاروں امریکیوں کی جانیں گئیں اور دس کھرب ڈالر سے زائد کا خرچہ ہوا، وقت آگیا ہے کہ ہم امریکہ میں قومی تعمیر نو کے عمل کا آغاز کریں“۔
اوباما جنگی مہم جوئی کے خلاف تھا۔ بالخصوص عراق پر فوج کشی کے خلاف عوامی مظاہروں کی قیادت کرتا رہا۔ وہ ”تبدیلی“ کے نعروں کی گونج میں واشنگٹن کے قصر سفید میں داخل ہوا اور پھر اس کے سیاہ فام بدن کی رگوں میں دوڑتا سرخ لہو بھی سفید ہوتا چلا گیا۔ امریکہ کے سابقہ حکمرانوں کی طرح وہ بھی منافقت، دوغلہ پن اور دہرے معیارات کی حیا باختہ راہوں پہ دوڑتا چلا گیا۔ آج بھی وہ تیس کروڑ کے لگ بھگ امریکی عوام سے جھوٹ بول رہا ہے۔ امریکہ کی براؤن یونیورسٹی کے واٹسن انسٹیٹیوٹ فار انٹرنیشنل اسٹیڈیز کی تحقیقاتی رپورٹ کو اب دنیا بھر میں ایک معتبر حوالے کا درجہ حاصل ہوچکا ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق افغانستان، عراق اور پاکستان کی مہم جوئی پر امریکہ37کھرب ڈالر پھونک چکا ہے۔ بتایا گیا ہے کہ جنگوں کے اختتام کے بعد بھی جنگی اخراجات کا سلسلہ جاری رہے گا اور یہ رقم 44کھرب ڈالر تک پہنچ جائے گی۔ اوباما خلائی مخلوق کو یہ بھی نہیں بتا رہا کہ امریکہ پر بیرونی قرضوں کا حجم 160کھرب ڈالر سے بڑھ چکا ہے جو اس کی مجموعی قومی پیداوار کے سو فیصد سے زائد ہے۔ اوباما اس حقیقت کا اظہار بھی ضروری خیال نہیں کرتا کہ نائن الیون سے لے کر اب تک 117 کھرب ڈالر کے قرضے لینا پڑے۔ اوباما کی حق گوئی یہ بتانے کی اجازت بھی نہیں دے رہی کہ گزشتہ گیارہ سالوں کے دوران امریکہ کو اوسطاً ہر سال 10کھرب ڈالر کے قرضے مانگنا پڑے۔ اوباما عوام سے یہ حقیقت بھی چھپائے ہوئے ہے کہ ہر امریکی اوسطاً پانچ ہزار ڈالر سے زائد کا مقروض ہوچکا ہے۔ اوباما کو یہ بتانے کا حوصلہ بھی نہیں ہو رہا کہ امریکی بجٹ کا خسارہ سو فیصد سے بڑھ چکا ہے یعنی اخراجات پورے کرنے کے لئے ہر سال حکومت کو مجموعی قومی آمدنی کے برابر قرضہ لینا پڑتا ہے۔ اوباما یہ بھی نہیں بتا رہا کہ جب اس نے جنوری 2009ء میں صدارت کا حلف اٹھایا تو امریکی قرضے106کھرب ڈالر تھے جن میں اوسطاً ساڑھے تیرہ کھرب سالانہ کے حساب سے54کھرب ڈالر کا اضافہ ہوچکا ہے۔ اوباما یہ بتانے سے بھی گریزاں ہے کہ امریکہ میں تعلیم، صحت، انفرا اسٹرکچر اور تعمیر و ترقی کے منصوبوں پر کیا گزری۔ اوباما یہ بھی نہیں بتا رہا کہ افغانستان کی جنگ گزشتہ گیارہ برس سے اوسطاً ہر روز ایک امریکی نگل رہی ہے۔ اوباما یہ بھی نہیں بتانا چاہتا کہ امریکی کروسیڈ اندازاً سوا دو لاکھ انسانوں کا لہو پی چکا ہے۔ اوباما کو یہ بتانے کا حوصلہ بھی نہیں کہ گونتانامو، ابوغریب، بگرام، قلعہ جنگی اور دنیا بھر میں پھیلی اذیت گاہوں کی انسانیت سوز کہانیاں امریکہ کے بارے میں کیا تاثر قائم کر رہی ہیں۔ اوباما یہ بتانے سے بھی گریز کر رہا ہے کہ گیارہ برس کے دوران امریکہ سے نفرت کرنے والوں کی تعداد تین گنا ہوگئی ہے اور اوباما خلائی مخلوق کو دنیا بھر کے در و دیوار پہ لکھی اس حقیقت سے بھی آگاہ نہیں کر رہا کہ ویتنام کے بعد امریکی رعونت ایک اور شرمناک شکست سے دوچار ہوچکی ہے۔
نائن الیون کی واردات آج تک ایک بھید بھری کہانی ہے پانچ سو سے زائد صفحات پر مشتمل، نائن الیون کمیشن بھی شواہد کی کڑیاں ملا سکا نہ کسی سازشی یا مجرم کا تعین کرسکا۔گیارہ برس سے سوالات گردش کر رہے ہیں اور کسی طرف سے کوئی ٹھوس جواب نہیں مل رہا۔ سوالات اٹھانے والوں میں خود امریکیوں کی بڑی تعداد شامل ہے۔ عالمی شہرت یافتہ صحافی رابرٹ فسک کا کہنا ہے ”میں واقعی مسلسل تبدیل ہوتے سرکاری موقف سے پریشان ہوں، میں ان عمومی سوالوں کا ذکر نہیں کر رہا کہ پنٹاگون پر حملہ کرنے والے طیارے کے اجزاء مثلاً انجن وغیرہ کہاں غائب ہو گئے!پنسلوانیا کی فلائٹ93کی تحقیقات میں شامل سرکاری افسران کے منہ کیوں سی دیئے گئے ہیں؟ میں تو ٹوئن ٹاورز کے بارے میں صرف سائنسی نقطہ نظر سے سوال کرتا ہوں مثلاً یہ درست ہے کہ تیل زیادہ سے زیادہ 820 ڈگری سینٹی گریڈ حرارت پیدا کرتا ہے تو پھر ٹوئن ٹاورز کے دو فولادی بیم کیسے پگھل کر ٹوٹ گئے جنہیں پگھلنے کے لئے 1480 سینٹی گریڈ حرارت چاہئے؟ یہ سب کچھ صرف آٹھ دس سیکنڈ کے دوران ہوگیا اور تیسرے ٹاور، ورلڈ ٹریڈ سینٹر بلڈنگ7یاساطن برادرز بلڈنگ کی کہانی کیا ہے جو پانچ بج کر بیس منٹ پر صرف 6.6سیکنڈ کے اندر خود اپنے قدموں پر ڈھیر ہوگئی؟ یہ اتنی عمدگی کے ساتھ کیوں کر زمیں بوس ہوگئی جبکہ اسے کسی طیارے نے چھوا تک نہیں…میں سازشی کہانیوں پر یقین کرنے والا نہیں لیکن دنیا کے ہر شخص کی طرح مجھے بھی پتہ چلنا چاہئے کہ نائن الیون کی اصل کہانی کیا ہے کیونکہ اس سے اس احمقانہ جنوبی جنگ کا شعلہ بھڑکا جسے ”وار آن ٹیرر“ کا نام دیا گیا “۔ رابرٹ فسک ہی نہیں، اس طرح کے سوالات لاکھوں کروڑوں انسانوں کی زبانوں پر ہیں لیکن امریکہ گنگ ہے۔ ایک غیر مصدقہ، مبہم، ذومعنی، غیر مربوط اور شاید خود ساختہ سی ٹیپ کو اسامہ بن لادن کے اعتراف گناہ“ کی شہادت کے طور پر کافی جان لیا گیا ہے۔
پاکستان میں لاپتہ ہوجانے والے افراد کے حوالے سے اقوام متحدہ کا ایک وفد اسلام آباد آچکا ہے۔ اچھا ہے، انسانی حقوق کی اس سنگین خلاف ورزی کا نوٹس لیا جانا چاہئے لیکن اقوام متحدہ اسی حساسیت کا مظاہرہ امریکہ کے حوالے سے کیوں نہیں کر رہا؟ کوفی عنان نے ستمبر 2004ء میں کہا تھا کہ “ ہمارے نقطہ نظر اور اقوام متحدہ کے چارٹر کی رو سے عراق جنگ خلاف قانون ہے۔ سوال پیدا ہوتا ہے کہ سوا لاکھ انسانوں سے زائد کا لہو پی جانے والی اس سفاک جنگ کے منصوبہ سازوں کے بارے میں اقوام متحدہ نے کیا کیا؟ امن کے نوبل انعام یافتہ اور انسانی حقوق کی پاسداری کے حوالے سے شہرت رکھنے والے پادری آرچ بشپ ڈسمنڈ ٹوٹو (Desmond Tutu) نے اپنی ایک حالیہ تحریر میں مطالبہ کیا ہے کہ سابق امریکی صدر جارج ڈبلیو بش اور سابق برطانوی وزیراعظم ٹونی بلیئر کے خلاف جنگی جرائم کا مقدمہ چلنا چاہئے۔ آرچ بشپ کی کوئی نہیں سنے گا کہ اقوام متحدہ بھی دراصل قصر سفید کی کنیز بن چکی ہے۔ اس کے سارے قوانین اور ضابطے اسلامی ممالک کے لئے مخصوص ہوکر رہ گئے ہیں۔
اگرچہ اسے انتہا پسندی، دقیانوسیت بلکہ دہشت گردی کی حمایت خیال کیا جائے گا لیکن گھنی داڑھیوں، بھاری پگڑیوں اور لمبی عباؤں والی اس مخلوق کو یاد کر لینے میں بھی کوئی ہرج نہیں جو گیارہ برس سے پچاس ممالک کی ڈیڑھ لاکھ فوج کے سامنے سینہ سپر ہے۔ جس کے پاس گھسی پٹی بندوقوں اور زائد المیعاد راکٹوں کے علاوہ اگر کچھ ہے تو صرف اپنے اللہ پر لازوال ایمان اور یہ اعتماد کہ وہ حق پر ہیں۔ دنیا کی کوئی اور قوم اسی جوانمردی کے ساتھ امریکہ کی قیادت میں جنگ آزما، جدید جنگی ہتھیاروں سے لیس اتنے بڑے لشکر بے اماں کا مقابلہ کرتی تو اس کے قصیدے لکھے جاتے، اس کے ہیروز پہ فلمیں بنتیں، اس کے جانبازوں پہ نظمیں تخلیق ہوتیں لیکن افغانستان میں گیارہ برس سے وقت کے فرعون کا مقابلہ کرنے اور اس کے عزائم کو خاک میں ملا دینے والوں کا المیہ یہ ہے کہ وہ اپنی جنگ کو محض قومیت کا لبادہ پہنانے کے بجائے اسلام کا نام لیتے ہیں اور ان کے چہروں پرگھنی داڑھیاں اور ان کے سروں پر بھاری پگڑیاں ہیں اور وہ لمبی عبائیں پہنتے ہیں۔

Saturday, September 8, 2012

Opinion


Ayaz Wazir
Part - II
It was an ordinary man from a small village in North Waziristan who, on a matter of much lower importance than what is happening to Islam now, took up arms against the British. The dominant imperial power of the time deployed more than ...

Iftekhar A Khan
Fleeting moments
As the 11th anniversary of the attacks on the World Trade Centre nears, are we any closer to unravelling the mystery as to who carried them out? Conspiracy theories abound, no widely convincing outcome of the attacks has so far ...


Friday, September 7, 2012

دہشت گرد بھائيوں سے


ہمارے دہشت گرد بھائي اتنے بہادر ہيں کہ انہيں مشير داخلہ رحمان ملک کي دھمکيوں سے بھي خوف نہيں آتا، چنانچہ جب ہمارے ملک صاحب بات کر رہے ہوتے ہيں تو کمزور اعصاب کا کوئي دہشت گرد تو ان کے پراعتماد لہجے ہي سے ہارٹ اٹيک کي نذر ہوسکتا ہے? ملک صاحب کوان لوگوں کا آئيڈيل ہونا چاہئے جن کي کارکردگي زيرو ہو ليکن ا ن کے لہجے سے لگتا ہے کہ لاء اينڈ آرڈر کي صورتحال ان کے کنٹرول ميں ہے، ميں تو ملک صاحب کا اتنا فين ہوں کہ دہشت گردي کي ہر کارروائي کے بعد ٹي وي آن کرتا ہوں، اور اس کا مقصد صرف رحمان ملک کي پراعتماد گفتگو سننا ہوتا ہے? وہ ہاتھ فضاء ميں بلند کرتے ہيں اور کہتے ہيں "Enough is Enough"اس کے بعد ان کے حواريوں کا پہلا اقدام ڈبل سواري پر پابندي عائد کرنا ہوتا ہے? اور آخري اقدام بھي يہي ہوتا ہے? دہشت گردي کو کنٹرول کرنے کے ملک صاحب کے دعوے ايک ايک کرکے محبوب کے وعدوں کي طرح ايفاء نہيں ہو پاتے چنانچہ پاکستاني عوام نے اپنے دو کانوں ميں سے ايک کان کو يہ وعدے ”ڈيليٹ“ کرنے ہي کے لئے رکھا ہوا ہے، کہا جاتا ہے کہ فرشتوں نے اپنے کمرے ميں ہر حکمران کے نام کا ايک کلاک لگايا ہوا ہے جس کا مقصد ان کے جھوٹ کو مانيٹر کرنا ہے? چنانچہ جب کوئي جھوٹ بولتا ہے تو اس کلاک کي سوئي ايک دم گھوم جاتي ہے،ملک صاحب کے لئے لگائے گئے کلاک کے بارے ميں پوچھا گيا کہ يہاں کيا صورتحال ہے؟ تو فرشتے نے جواب ديا ”اس کي سوئي ہر وقت گھومتي رہتي ہے چنانچہ ہم اس کلاک سے پيڈسٹل فين کا کام ليتے ہيں“?
اس صورتحال کے باوجود جو ميں نے ابھي بيان کي ہے? دہشت گرد بھائيوں سے ميري گزارش ہے کہ وہ پھر بھي احتياط سے کام ليں? وقت کا کوئي پتہ نہيں ہوتا،اگرچہ وہ کبھي پکڑے بھي جائيں تو کوئي عدالت ان کا بال تک بيکا نہيں کرسکتي مگر پھر بھي احتياط لازم ہے اس ضمن ميں کچھ مشورے پيش خدمت ہيں جو کامياب کارروائي کے ضمن ميں ان کے لئے مفيد ثابت ہوسکتے ہيں? ايک مشورہ تو يہ ہے کہ اپني نقل و حرکت، بارش کے دوران کيا کريں? ميرے گھر کے رستے سے ميرے دفتر تک ناکے ہي ناکے لگے ہوئے ہيں جس کي وجہ سے بہت وقت ضائع ہوتاہے مگر جس روز بارش ہو رہي ہوتي ہے? ناکے بھي خالي ہوتے ہيں? ڈيوٹي پرمتعين سب اہلکار بھاگ چکے ہوتے ہيں ”نقل و حملہ“ کے لئے دوسرا بہترين وقت رات کے بارہ بجے کے بعد کا ہے? ان اوقات ميں بھي تمام ناکوں پر ہُوکا عالم ہوتا ہے? اپنے دہشت گرد بھائيوں کي دلچسپي کے لئے ايک واقعہ بيان کرتا چلوں? ايک بار ميں پشاور جيسے حساس علاقے سے رات کو لاہور کيلئے روانہ ہوا اور چھ گھنٹے کے اس سفرکے دوران الحمد للہ کسي ايک ناکے پر بھي کوئي مائي کا لال نظر نہيں آيا… ميں جانتا ہوں کہ متذکرہ دونوں اوقات کي کوئي ”اوقات“ نہيں کيونکہ ميرے دہشت گرد بھائي تو دفاعي اداروں ميں بھي دندناتے ہوئے داخل ہو جاتے ہيں اور کارروائي کے بعد سيٹياں بجاتے باہر نکل آتے ہيں مگر پھر بھي احتياط ميں کيا حرج ہے؟ميرے دہشت گرد بھائيوں کے کرنے کا ايک کام اور بھي ہے اور وہ يہ کہ جو اسلام وہ پاکستان ميں نافذ کرنا چاہتے ہيں اس اسلام کي مزيد ترويج و ترقي کے لئے ابھي مزيد کچھ کام کريں اگرچہ تھوڑے بہت اختلاف کے ساتھ ہمارے مذہبي سوچ رکھنے والے افراد اسي اسلام کے قائل ہيں جو دہشت گردوں کا ہے اور وہ دوسروں کے ذہنوں ميں ايک عرصے سے اس اسلام کا نقش ثبت کرتے چلے آ رہے ہيں جس کے مثبت نتائج آج آپ لوگوں کي سوچ ميں نظر آتے ہيں ?تاہم جو طبقے آپ سے متفق نہيں ہيں مجھے علم ہے کہ آپ انہيں متفق کرنا جانتے ہيں آپ اتمام حجت کے لئے انہيں اپنا اسلام قبول کرنے کي دعوت ديں? اگر وہ قبول کريں تو فبہا ورنہ ميں کس قابل ہوں کہ آپ کو بتاؤں? آپ نے کيا کرنا ہے؟ تھوڑي سي جسارت کرتے ہوئے ايک مشورہ يہ بھي دينا چاہتا ہوں کہ آپ کي ايک شاخ کچھ عرصے سے اہل تشيع کو نشانہ بنا رہي ہے جس کا مقصد پورے ملک ميں شيعوں اور سنيوں کو ايک دوسرے کے خلاف صف آراء کرنا ہے? اس سے پہلے سنيوں کي مساجد ميں بھي بم دھماکے کئے گئے? اتني اشتعال انگيزيوں کي وجہ سے ملک بھر ميں شيعہ سني فساد کب کا شروع ہو جانا چاہئے تھا ليکن چونکہ يہ دونوں فرقے صديوں سے ايک دوسرے کے ساتھ رہ رہے ہيں اور ہمارے آئمہ نے اختلافات کے باوجود کسي کو دائرہ اسلام سے خارج قرار نہيں ديا لہ?ذا آپ کي کارروائيوں سے معصوم لوگ مارے تو جا رہے ہيں ليکن آپ کا اصل مقصد پورا نہيں ہو رہا? براہ کرام آپ نئي اسٹريٹجي کے لئے اپنے ”ماسٹر مائنڈ“ سے رجوع کريں? مجھے علم نہيں وہ آج کل دہلي ميں ہے يا واشنگٹن ميں? يہ آپ کو علم ہوگا،تاہم ميري گزارش ہے کہ آپ فوري طور پر اس سے رابطہ کريں? آخر ميں مجھے اپنے بعض کند ذہن قارئين کے لئے ايک وضاحت کرنا ہے، وہ سوچ رہے ہوں گے کہ ميں آپ لوگوں کو اپنا بھائي کيوں کہہ رہا ہوں اور آپ کي دہشت گردانہ کارروائيوں کو تيزسے تيز تر کرنے کے لئے مشورے کيوں دے رہا ہوں تو ان لوگوں کي اطلاع کے لئے عرض ہے کہ آپ ميرے سيکولر بھائي ہيں سيکولر وہ ہوتا ہے جو مسلمان اور غير مسلمان دونوں کو ايک نظر سے ديکھتا ہے اور مجھے آپ کا يہ سيکولرازم ہي پسند ہے، آپ بہت ہجوم والے مقامات پر کارروائي کرتے ہوئے يہ نہيں ديکھتے کہ آپ کي زد ميں کس مذہب کا پيروکار آرہا ہے کيونکہ آ پ کي سيکولر سوچ اس کي اجازت نہيں ديتي چنانچہ آپ سب کے چيتھڑے اڑا ديتے ہيں، اسي طرح ان لمحوں ميں کوئي فرقہ بھي آپ کے لئے مقدس نہيں رہتا? آپ سب کو بڑے ”دربار“ ميں پہنچا ديتے ہيں بلکہ کبھي کبھي تو مجھے آپ پر رشک آتا ہے کہ آپ اپنے سيکولرازم ميں اتنے راسخ ہيں کہ کسي کي صنف يا ماہ و سال کو بھي خاطر ميں نہيں لاتے چنانچہ عورتيں، مرد،بچے، بوڑھے، جوان سب آپ کي غارت گري کي زد ميں ہوتے ہيں?
يہ نصيب اللہ اکبر لوٹنے کي جائے ہے!
اپنے بعض کند ذہن قارئين کے لئے آخر ميں ايک گزارش يہ بھي کرني ہے کہ بھائي، ميں ايک کالم نگار ہوں اور مجھے لگتا ہے کہ آپ لوگ کالموں کے باقاعدہ قاري نہيں ہيں? ورنہ آپ کو علم ہوتا کہ دہشت گردي کالموں کے ذريعے بھي کي جاتي ہے آپ کبھي ميرے پاس تشريف لائيں ميں آپ کو اپنے اور بعض دوسرے دوستوں کے کچھ کالم پڑھنے کے لئے دوں گا، اگر آپ کو ان کي زبان، ان کا لہجہ اور ان کا رويہ کسي دہشت گرد سے کم محسوس ہو تو پھر اعتراض کريں? سو يہ دہشت گردميرے پيٹي بند بھائي ہيں ميں اگر ان کا بھلا نہ سوچوں تو اور کياکروں؟
 …عطاء الحق قاسمي
http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=20618